supreme counsel nagar meeting with governor gilgit baltistan raja jala maqpon 66

سپریم کونسل نگر کا گورنر گلگت بلتستان راجہ جلال حسین مقپون سے اہم ملاقات

سپریم کونسل نگر کا گورنر گلگت بلتستان راجہ جلال حسین مقپون سے اہم ملاقات

گلگت(بیورورپورٹ )گورنر گلگت بلتستان راجہ جلال حسین مقپون نے کہا ہے کہ

شاہراہ نگر کی تعمیر ، قراقرم یونیورسٹی کیمپس کا قیام سمیت ضلع نگر کی مجموعی مسائل و مشکلات کو ترجیحی بنیادوں پر حل کیاجائے گا۔

شاہراہ نگر کی تعمیر سے گلگت بلتستان میں سیاحت کو فروغ ملے گا اور شاہراہ قراقرم کا متبادل روڈ بھی تیار ہوگا، ضلع نگر کا بہت جلد دورہ کر کے مسائل و مشکلات کا نزدیک سے مشاہدہ کروں گا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے سپریم کونسل نگر کی اعلیٰ سطحی وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کہا۔ گورنر گلگت بلتستان نے کہا کہ قراقرم یونیورسٹی کا ضلع نگر اور ضلع استور میں کمپسیز کا قیام عمل میں لانے کیلئے کوشاں ہوں اور اس سلسلے میں متعلقہ اداروں سے بات چیت بھی ہوچکی ہے۔ شاہراہ نگر کی فزبیلٹی کو جلد از جلد کروانے کے حوالے سے متعلقہ اداروں سے بات چیت کیجائے گی-




پاسپورٹ آفس نگر اور شگرکے فوری بحالی کیلئے وفاقی وزیر سے بات چیت ہوچکی ہے اس حوالے سے بہت جلد پیش رفت ہوجائے گی۔ ضلع نگر میں اساتذہ کی کمی، ڈگری کالج کا قیام، مخلوط نظام تعلیم کو ختم کرنے ، ہسپتالوں میں ڈاکٹرز اور سٹاف کی تعیناتی کے حوالے سے متعلقہ اداروں سے رپورٹ طلب کی جائے اور حل کرنے کی بھر پور کوشش کی جائے گی۔ گورنر گلگت بلتستان نے مزید کہا کہ ضلع نگر میں بوائے سکاوٹس کی بحالی سمیت فعال کرنے کے لئے بھی اقدامات اٹھائے جائیں گے۔

اس سے قبل چیرمین سپریم کونسل نگر محمد حسین ایڈوکیت ، ممبر گلگت بلتستان اسمبلی حاجی رضوان علی و دیگر وفد میں شامل افراد نے ضلع نگر کی مسائل و مشکلات کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ شاہراہ نگر کی تعمیر وقت کی اہم ضرورت ہے جس سے نہ صرف ضلع نگر کے عوام کو فائدے حاصل ہونگے بلکہ گلگت بلتستان میں سیاحت کی فروغ سمیت شاہراہ قراقرم کے متبادل روڈ کی شکل میں تیار ہوگا-

قراقرم یونیورسٹی کیمپس کے قیام کے حوالے سے گورنر گلگت بلتستان کو بتایا کہ ضلع نگر میں قراقرم یونیورسٹی کا کیمپس ناگزیر ہوچکا ہے لہذا فوری طور پر کیمپس کا قیام عمل میں لانے کیلئے کرادار ادا کریں۔ وفد نے گورنر کو بتایا کہ نگر کی 80فی صد سکولوں کو اساتذہ کی کمی کا سامنا ہے اور سینکڑوں آسامیاں خالی ہے جو کہ مشتہر نہیں کیا جارہا ہے، ضلع نگر میں تین بڑے ہسپتالوں کی عمارت تیار ہوچکے ہیں لیکن ان میں نہ مشینری، نہ ڈاکٹرز اور نہ ہی سٹاف موجود ہے لہذا فوری پر مشینری، ڈاکٹرز اور ستاف کو تعینات کیا جائے، ایفاد پراجیکٹ میں ضلع نگر کو مکمل طور پر نطر انداز کیا ہوا ہے ،

فیز ون کی طرح اب فیز ٹو میں ضلع نگر کو ایک سوچی سمجھی ساز ش کے تحت شامل نہیں کیا گیا ہے لہذا فوری طور پر اس اہم پراجیکٹ میں ضلع نگر کو شامل کیاجائے،




سپریم کونسل نگر کی وفد نے گلگت بلتستان کو آئینی صوبے بنانے کے حوالے سے اپنے موقف سے گورنرگلگت بلتستان کو آگاہ کیا ۔ گورنر کو بتایا کہ گلگت بلتستان کے باقی اضلاع میں انتظامی سطح پر بوائے سکاوٹس کو فعال کیا گیا ہے لیکن ضلع نگر میں بوائے سکاوٹس کے اہم شعبے کو مکمل طور پر نظر انداز کیا گیا ہے ، گورنر گلگت بلتستان نے وفد کو یقین دہانی کرایا کہ ضلع نگر کی مسائل و مشکلات کو ترجیحی بنیادوں پر حل کیا جائے، اور امید ہے کہ نگر کی عوام ہمارے ساتھ بھر پور تعاون کریں گے۔

آخر میں سپریم کونسل نگر نے گورنر گلگت بلتستان کو ضلع نگر کا باقاعدہ دورہ کرنے کی دعوت دیں جوکہ گورنر گلگت بلتستان نے قبول کیا۔



Spread the love
  • 2
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
    2
    Shares
  • 2
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

Leave a Reply